پھول

اردو_لغت سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی, تلاش

اینڈرائیڈ اپلیکیشن اردو انسئیکلوپیڈیا کی اینڈرائیڈ اپلیکشن کا اجراء کر دیا گیا ہے۔ ڈاؤنلوڈ کرنے کے لیے ابھی کلک کریں۔

Urdu Encyclopedia on Google Android

اردو
اردو نستعلیق رسم الخط میں
برصغیر پاک و ہند کے اکثر علاقوں میں بولی اور سمجھی جانے والی زبان جس کے لغات میں پراکرت نیز غیر پراکرت، دیسی لفظوں کے ساتھ ساتھ عربی فارسی ترکی اور کچھ یورپی زبانوں کے الفاظ بھی شامل ہیں اور جس کی قواعد میں عہد بہ عہد تصرفات اور مقامی اختلافات کے باوجود آریائی اثر غالب ہے۔ (ابتداءً ہندوی یا ہندی کے نام سے متعارف رہی۔


پھُول {پھُول} (سنسکرت)

پھُولَّن، پھُول

سنسکرت میں اسم پھُولَّن سے ماخوذ پھول اردو میں بطور اسم اور گاہے بطور صفت استعمال ہوتا ہے۔ سب سے پہلے 1433ء کو "بحرالفضائل" میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم نکرہ (مذکر - واحد)

جمع غیر ندائی: پھُولوں {پھُو + لوں (و مجہول)}

فہرست

[ترمیم] معانی

1. پودے کا تناسلی عضو جس میں ایک یا ایک سے زیادہ پتیاں ہوتی ہیں، پودے کا رنگین (سبز کے علاوہ) حصہ جو بعد میں تخم یا پھل کی شکل اختیار کر لیتا ہے، گل، کسم۔

"پجاری جب مندر میں اپنی مورتیوں پر پھول چڑھاتا ہے تو وہ پھول اس کی انکساری عبودیت کا مظہر ہوتے ہیں۔"، [1]

2. بیل بوٹے جو کپڑے پر کاڑھے جاتے یا بنائے ہیں۔

؎ اپنی قبائے اطلسی چاک ہی کیوں گلوں نے کی

پھول نظر پڑا کوئی یار کے جامہ وار کا، [2]

3. چنگاری، شرارہ، پتنگا۔

"آتش بازی کے پھول تو آپ نے ضرور سنے ہوں گے۔"، [3]

4. چراغ کی جلتی ہوئی بتی پر پڑے ہوئے گول دہکتے دانے جو ابھرے ہوئے معلوم ہوتے ہیں، گل۔

؎ اے داغ روشنی ہے خداداد طبع میں

بجھتے نہیں ہیں میرے چراغِ سخن کے پھول، [4]

5. { مسلم } مردے کی تیسرے دن کی فاتحہ جس میں پھول اٹھائے جاتے ہیں، سوم، تیجا(ان معنوں میں فصل جمع میں آتا ہے)۔

"غمی میں حاضری، پھول، دسواں بیسواں وغیرہ سب اس کے ہاں ہوتا ہے۔"، [5]

6. { ہندو } مردے کی جلی ہوئی ہڈیاں (راکھ) جو گنگا یا کسی اور دریا میں بہانے کے واسطے لے جائی جاتی ہے۔

؎ یا رب نہ دفن کر کے احباب بھول جائیں

لے کر ہمارے خوش خوش گنگا کو پھول جائیں، [6]

7. دو آتشہ شراب۔

؎ ساقی یہی تو پھول پلانے کا وقت ہے

مے خوار باغ باغ ہیں آمد گھٹا کی ہے، [7]

8. پیتل وغیرہ کی گھنڈی جو زیبائش کے لیے چھڑی یا کواڑ کے جوڑ وغیرہ پر جڑی جائے، گلدار کیل۔

"(پیتل) عموماً قفلوں، دروازوں، دستیوں، قبضوں، پیجوں، پھولوں اور گردانکوں .... کے کام آتی ہے۔"، [8]

9. کوڑھ کے سفید یا لال داغ جو پھلیری بھی کہلاتے ہیں۔

"برص یا کوڑھ کے دھبے .... کو بھی پھول کہتے ہیں۔"، [9]

10. کسی چیز کا ست، اجواین کا پھول۔

(شبدساگر)۔

11. { عوام } اول دفعہ کا خونِ حیض۔

(فرہنگِ آصفیہ؛ نوراللغات)

12. سوکھے ہوئے ساگ، بھنگ یا تمباکو وغیرہ کے پتے۔

"سوکھی میتھی کے دو پھول ڈال دینے سے مچھلی کی بواڑ جاتی ہے۔"، [10]

13. کسی پتلی چیز کو جما کر سکھائے ہوئے ذرے۔

"سیاہی پھیکی ہے دو پھول اور ڈال دو۔" [11]

(پھول کی شکل کی) پانوں کی کترنیں۔

؎ کہو بلبل سے کہ منقار کی لائے مقراض

پھول پانوں کے لیے ہیں وہ کترنے والے [12]

14. جست تانبے اور پیتل کی ملی جلی دھات، (بھرت، سونا چاندی) کانسی، عوج، گھڑیالی دھات، کچ دھات۔

"کانسی دھات کو بھی پھول کہتے ہیں۔"، [13]

15. { مجازا } نشتر کی نوک۔

؎ جوش سودا ہے خزاں میں فصد میری لی اگر

جھڑ گیا ہے پھول دم میں نشتر فصاد سے [14]

وہ ہلکی سے درددراہٹ جو سان رکھنے کے بعد استرے وغیرہ کی دھار پر پیدا ہو جاتی ہے۔

(ماخوذ : مہذب اللغات)۔

16. پیتل کا نشان جو ڈھال پر ہوتا ہے۔

؎ خون کی شفق دروں کو بہار دروں کو بہار باغ

لاتا ہے تیغ تیز کا پھل پھول ڈھال کا، [15]

17. { مجازا } بچہ دانی، رحم۔

(شبدساگر)۔

18. گھٹنے کی گول ہڈی، چینی۔

(ماخوذ : شبدساگر)

19. متھانی (وہ ظرف جس میں دہی دودھ وغیرہ بلوتے ہیں) کے آگے کا حصہ جو پھول کی شکل کا ہوتا ہے جس سے انڈیلنے میں آسانی رہتی ہے۔

20. آنکھ کی پھلی۔

؎ زبان حال سے یوں کوستی رہی سوسن

کہ تیری آنکھوں میں دایم ہو پھول کا مسکن، [16]

21. (پھول کی شکل کا) گہنا (جو کان میں پہنا جاتا یا ماتھے پر لگایا جاتا ہے) ٹوپس، ٹیکہ۔

؎ پھول اس نے اپنے کان کا شب غیر کو دیا

ہاتھوں سے اس کے کھائیں گے ہم گل علی الصباح، [17]

22. { مجازا } بچہ (لڑکا یا لڑکی)۔

"وہ میں ہوں جس نے آپ کے پھول کو خاک میں ملا دے۔"، [18]

23. پھول کی شکل کا نقش یا نشان۔

"جہاں دیوان غزلیات ختم ہوتا ہے، پھول بنا ہوا ہے۔"، [19]

24. تاش کے چار رنگوں میں سے ایک رنگ، چڑی۔

(مہذب اللغات)

25. ایسا گھوڑا جس کے پٹھوں یا دوسرے اعضا پر سفید داغ ہوں، پھولا۔

(ماخوذ : رسالہ سالوتر، 40:2)

26. { طب } تصعید (Sublimation) وہ عمل ہے جس کے ذریعہ ایک ٹھوس کو پہلے آنچ کے ذریعہ بخار بنایا جاتا ہے اور پھر اس بخار کو ایک دوسرے برتن کی سطح پر ایک جماؤ کے طور پر متکثف کیا جاتا ہے خواہ یہ ایک تودہ کی شکل میں ہو، جب کہ اس کو مصعد .... کہا جاتا ہے .... خواہ باریک سفوف نما حالت میں ہو، جس کو پھول (Flowers) کہتے ہیں جیسے آنولہ سار گندھک (Flowers sulpher)

27. پھول کی شکل کے سونے چاندی کے ورق جو بادشاہوں اور دولھاؤں پر نچھاور کرتے ہیں۔

(ماخوذ : نوادرالالفظ، 126)

28. لوہے کا چھلا جو دھرے یا کسی سوراخ میں لگا ہوتا ہے؛ سوراخ دارنٹ۔

"فولادی خراد شکنجہ .... ایک فولادی بش یعنی پھول میں گھومتا ہے۔"، [20]

29. کاغذ یا کپڑے کا گل؛ فیتوں کا گچھا، فیتہ جو ٹوپی یا کوٹ کے بٹن میں لگایا جائے؛ کپڑا جو گوشت یا زخم میں پڑ جائے؛ نمک شورے وغیرہ کا سفوف جو دیوار پر جم جاتا ہے، نونی؛ سوجن۔

(جامع اللغات)۔

30. (چوروں کی اصطلاح) کوئی پوشیدہ اور سنسان جگہ جسے چوری کے مشورے کے لیے جمع ہونے کو منتخب کر کے وہاں کوئی علامت بطور نشانی بنا دی ہو۔ عام طور سے کوئی پھول بنا دیا جاتا ہے اور یہی وجہ تسمیہ ہے۔

(اصطلاحاتِ پیشہ وراں، 179:8)

[ترمیم] انگریزی ترجمہ

a flower, a blossom; a boss, knob, stud, bunch of rosette, cockade; the menses (of which children are the blossoms); a swelling; a spark of fire; lights or fire; lights or fire (seen at night); the bones of a corpse after partial cremation; a ceremony performed (by Musalmans) in honour of a deceased person on the third day after his death , when a portion of Quaran is recited , and flowers are placed on trays in the midst of the assembly; a white metal, bell metal, electrum; the white marks of leprosy; a pearl or white opaque spot in the corner of the eye; a maggot that is hatched in meat or in neglected sores

صفت ذاتی

[ترمیم] معانی

1. ہلکا، سبک۔

؎ نظروں میں تولتے ہیں اسی وجہ سے انہیں

ہوتے ہیں عضو ہر بتِ نازک بدن کے پھول، [21]

[ترمیم] مترادفات

گُل، کَلی، غُنْچَہ، شَراب، ہَلْکا، چِنْگاری،

[ترمیم] مرکبات

پھُول بَن، پھُول پات، پھُول پان، پھُول پَتّی، پھُول پَتِّیاں، پھُول پَتّے، پھُول پھُنْکار، پھُول جھاڑُو، پھُول داری، پھُول دان، پھُول ڈَنْڈی، پھُول ڈول، پھُول سا، پھُول سُوئی، پھُول فاتِحَہ، پھُول کا بَرْتَن، پھُول کی ٹَٹّی، پھُول کی چھَڑی، پھُول کی کُرْسی، پھُول کے دِن، پھُول گوبی، پھُول مَٹَر، پھُول والا، پھُول والوں کا میلَہ، پھُول دار

[ترمیم] حوالہ جات

  1. ( 1922ء، نقشِ رنگ، 18 )
  2. ( 1836ء، ریاض البحر، 8 )
  3. ( 1911ء، محاکمۂ مرکز اردو، 23 )
  4. ( 1905ء، داغ، یادگار داغ، 32 )
  5. ( 1923ء، احیاء ملت، 54 )
  6. ( 1910ء، خمکدۂ سرور، 43 )
  7. ( 1915ء، جانِ سخن، 119 )
  8. ( 1948ء، اشیائے تعمیر، 139 )
  9. ( 1911ء، محاکمۂ مرکز اردو، 24 )
  10. ( 1911ء، محاکمۂ مرکز اردو، 24 )
  11. ( 1911ء، محاکمۂ مرکز اردو، 24 )
  12. ( 1888ء، صنم خانۂ عشق، 214 )
  13. ( 1911ء، محاکمۂ مرکز اردو، 24 )
  14. ( 1880ء، قلق (نوراللغات) )
  15. ( 1900ء، دیوانف حبیب، 3 )
  16. ( 1908ء، مخزن، 15، 67:2 )
  17. ( 1813ء، پروانہ، کلیات، 192 )
  18. ( 1929ء، وداع خاتون، 15 )
  19. ( 1966ء، مقدمہ کلیاتِ ذوق، 34 )
  20. ( 1948ء، انجینیری کارخانے کے چالیس عملی سبق، 78 )
  21. ( 1905ء، داغ، یادگارِ داغ، 31 )

[ترمیم] مزید دیکھیں

عرض ناشر
لغت کو ممکنہ غلطیوں سے پاک کرنے کی پوری کوشش کی گئی ہے پھر بھی انسان خطا کا پتلا ہے لغت کو مزید بہتر بنانے کے لئے یا لغت کے استعمال میں کسی بھی قسم کی دشواری کی صورت میں admin@urduencyclopedia.org سے رابطہ کریں۔
ذاتی اوزار
متغیرات
ایکشنز
رہنمائی
اوزاردان
دیگر شعبہ جات
Besucherzahler brides of ukraine
website counter